عنوان: کیا حضرت خضر نبی ہیں؟اور کیا وہ زندہ ہیں؟(102936-No)

سوال: حضرت! پوچھنا تھا کہ کیا خضر علیہ السلام نبی ہیں ؟اور کیا اس وقت دنیا میں موجود ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ حضرت خضر علیہ السلام کی نبوت اور حیات کے بارے میں اختلاف ابتداء سے ہی چلا آرہا ہے، اس بارے میں دونوں طرح کے اقوال موجود ہیں، اس لئے قطعی طور پر کوئی فیصلہ کرنا دشوار ہے، البتہ راجح قول کے مطابق حضرت خضر علیہ السلام نبی تھے۔
نیز محققین محدثین کے نزدیک ان کا انتقال ہو چکا ہے، جبکہ جمہور علماء اور صوفیاء کے نزدیک وہ ابھی تک حیات ہیں۔

________
دلائل:

لما فی احکام القرآن للقرطبی:

تحت آیۃ فوجدا عبدا من عبادنا الآیۃ ……والخضر نبی عند الجمھوروقیل ھو عبدصالح غیر نبی والآیۃ تشھد بنبوتہ لان بواطن افعالہ لاتکون الابوحی وایضا فان الانسان لایتعلم ولایتبع الامن فوقہ ولیس یجوز ان یکون فوق النبی لیس بنبی۔وقیل کان ملکا امر اﷲ……والاول صحیح۔

(ج: 11، ص: 14)

وفی تفسیر ابن کثیر:

وذکر ابن قتیبۃ فی المعارف ان اسم الخضربلیا بن ملکان …… قالوا :وکان یکنی اباالعباس ویلقب بالخضر وکان من ابناء الملوک ذکرہ النووی فی تھذیب الاسماء وحکی ھو وغیرہ فی کونہ باقیا الی الآن ثم الی یوم القیمۃ قولین ومال ھو وابن الصلاح الی بقائہ وذکروا فی ذلک حکایات وآثارا عن السلف وغیرھم وجاء ذکرہ فی بعض الروایات ولایصح شیٔ من ذلک واشھرھا حدیث التعزیۃ واسنادہ ضعیف ورجح آخرون من المحدثین وغیرھم خلاف ذلک واحتجوا بقولہ تعالی وماجعلنا لبشر من قبلک الخلد وبقول النبی ا یوم بدر اللھم ان تھلک ھذہ العصابۃ لاتعبد فی الارض وبانہ لم ینقل انہ جاء رسول اﷲ ا ولاحضر عندہ ولاقاتل معہ ولوکان حیا لکان من اتباع النبی ا واصحابہ لانہ علیہ السلام کان مبعوثا الی جمیع الثقلین۔

(ج: 3، ص: 94)

کما فی تفسیر روح المعانی:

ابقی اﷲ تعالی بعد وفاتہ علیہ السلام من الرسل الاحیاء باجسادھم فی ھذہ الدار اربعۃ ادریس والیاس وعیسی والخضر علیھم السلام والثلاثۃ الاول متفق علیھم والاخیر مختلف فیہ عند غیرنا لاعندنا۔

(ج: 15، ص: 328)

وفی مرقاۃ المفا تیح:

قال النووی جمھور العلماء علی انہ حی موجود بین اظھرنا سیما عند الصوفیۃ …قال الحمیری المفسر وابو عمرو ھو نبی…اذلا یصح لاحد من الاولیاء ان یقتل نفسا زاکیۃ بغیر نفس اعتماد ا علی الوحی الالھامی بانہ طبع کافرا … وفی الجا مع الصغیر روی الحارث عن انس الخضر فی البحر والیاس فی البر یجتمعان کل لیلۃ عند الروم الذی بناہ ذوالقرنین …وفی الفتاوی الحدیثیۃ رواہ ابن عدی فی الکامل ان الیاس والخضر علیھما الصلوۃ والسلام یلتقیان فی کل عام بالموسم۔

(ج: 11، ص: 18)

کما فی فتح الباری:

قال ابن الصلاح ہوحی عند جمہور العلماء والعامۃ معہم فی ذلک وانما شذبانکارہ بعض المحدثین وتبعہ النووی وزادان ذلک متفق علیہ بین الصوفیۃ واہل الصلاح وحکایاتہم فی رؤیتہ والاجتماع بہ اکثر من ان تحصر انتہی وروی الدارقطنی فی الحدیث المذکورقال مدّ للخضر فی اجلہ حتی یکذب الدجال وقال عبدالرزاق فی مصنفہ عن معمر فی قصۃ الذی یقتلہ الدجال ثم یحییہ بلغنی انہ الخضر وکذا قال ابراہیم بن سفیان الراوی عن مسلم فی صحیحہ

(ج: 4، ص: 434، ط: دارالمعرفۃ،بیروت)

کما فی التفسیر المظھری:

ولایمکن حل ھٰذا الاشکال الاَّ بکلام المجدد للالف الثانیؒ فانہٗ حین سئل عن حیاۃ الخضر علیہ السلام ووفاتہ توجہ الی اللّٰہ سبحانہ متعلمًا مّن جنابہٖ عن ھٰذا الامر فریٔ الخضرعلیہ السلام حاضرًا عندہ فسئلہ عن حالہٖ فقال اَنَا والیاس لسنا من الاحیاء لکن اللّٰہ سبحانہٗ اعطی لا رواحنا قوۃ نتجسد بھا ونفعل بھا افعال الاحیاء من ارشاد الضّال واغاثہ الملہوف اذا شاء اللّٰہ وتعلیم اللّدُنّی واعطاء النسبۃ لمن شاء اللّٰہ تعالٰی۔

(سورۃ الکہف، ج: 4، ص: 42، آیت نمبر: 82)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 684

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com