عنوان: کیا گناہ کبیرہ بھی توبہ سے معاف ہوجاتے ہیں؟(105143-No)

سوال: ہماری مسجد کے امام صاحب ایک مرتبہ کہہ رہے تھے کہ انسان جب توبہ کرتا ہے تو اللہ تعالی اس کے سارے گناہوں کو معاف فرما دیتے ہیں، کیا یہ بات صحیح ہے کہ اللہ تعالی سارے گناہ معاف کر دیتا ہے، اگر کوئی انسان گناہ کبیرہ کرے اور توبہ کرلے، تو کیا اس کے گناہ کبیرہ بھی توبہ سے معاف ہو جائیں گے؟

جواب: جی ہاں! اگر انسان سچے دل سے توبہ کر لے، تو اللہ تعالی اس کے تمام صغیرہ اور کبیرہ گناہ معاف فرما دیتے ہیں، البتہ جن گناہوں کا تعلق بندوں کے حقوق سے ہے، ان سے توبہ کی تکمیل کے لیے ضروری ہے کہ ان بندوں کے حقوق ادا کردے یا ان سے حقوق معاف کروالے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

قال اللہ تبارک وتعالیٰ:

قل یعبادی الذین اسرفوا علیٰ انفسہم لاتقنطوامن رحمۃ اللّٰہ ان اللّٰہ یغفرالذنوب جمیعاً انہ ہوالغفورالرحیم‘۔

(سورہۃ زمر الآیۃ: 53)


کذا فی شرح فقہ اکبر:

وان کانت عما یتعلق بالعباد فان کانت من مظالم الاموال فیتوقف صحۃ التوبۃ منہا مع ماقدمناہ فی حقوق ﷲ علی الخراج عن عہدۃ الاموال وارضاء الخصم فی الحال او الاستقبال بان یتحلل منہم او یردہا الیہم او الی من یقوم مقامہم من وکیل او وارث ۔

(شرح فقہ اکبر ص:194، بحث التوبۃ، مطبوعہ رحیمیہ دیوبند)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 269
kia gunnah e kabeera bhi toba say maaf hojaty hain?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.