عنوان: کیا کفریہ کلمات کا وسوسہ آنے سے گناہ ملے گا؟(107052-No)

سوال: السلام علیکم، اگر انسان بھول کر یا وسوسے کا شکار ہو کر کسی کے سامنے اعتراف کرے کہ اس نے ماضی میں کفریہ کلمات بولے ہیں، حالانکہ حقیقت میں اس نے وہ کلمات نہیں بولے تو ایسا کرنے سے کیا وہ گناہگار ہوگا؟

جواب: اگر کسی شخص کو کفریہ کلمات کہے جانے کے متعلق شک یا وسوسہ ہوجائے، تو محض شک یا وسوسہ سے وہ شخص کافر یا گناہ گار نہیں ہوتا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الصحیح البخاری:

حَدَّثَنَا الْحُمَيْدِيُّ ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ ، حَدَّثَنَا مِسْعَرٌ ، عَنْ قَتَادَةَ ، عَنْ زُرَارَةَ بْنِ أَوْفَى ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، قَالَ : قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : إِنَّ اللَّهَ تَجَاوَزَ لِي عَنْ أُمَّتِي مَا وَسْوَسَتْ بِهِ صُدُورُهَا مَا لَمْ تَعْمَلْ أَوْ تَكَلَّمْ .

(رقم الحدیث:2528)

وکذا فی مرقاۃ المفاتیح:

قولہ: ’’مالم تعمل أو تکلم‘‘ إشارۃ إلی أن وسوسۃ الأعمال والأقوال معفوۃ قبل ارتکابہا۔
(ج:1، ص:134، ط: ملتان)

کذا فی الاشباہ والنظائر:

قال العلامۃ ابن نجیم المصریؒ:الیقین لایزول بالشک۔(ج:1، ،ص:183)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 229

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.