عنوان: کیا ایسے مالِ میراث کی وجہ سے قربانی واجب ہوگی، جسے تقسیم کرنے کے بعد ورثاء کے قبضہ میں نہ دیا گیا ہو؟(107917-No)

سوال: مفتی صاحب ! والد کے انتقال کے بعد ورثاء میں میراث تقسیم ہو گٸی ہے، لیکن مال ورثاء کے قبضہ میں دیا نہیں ہے، سارا کچھ والدہ کے پاس ہے اور والدہ ہی انتظامات کر رہی ہیں تو کیا سب ورثاء پر فردا فردا قربانی واجب ہوگی؟

جواب: صورتِ مسئولہ میں وراثت کا مال چونکہ تقسیم کرنے کے بعد ورثاء کے قبضہ میں نہیں دیا گیا ہے، لہذا اس مال کی وجہ سے ورثاء پر قربانی واجب نہیں ہوگی، البتہ اگر کسی عاقل بالغ وارث کی ملکیت میں مذکورہ مالِ وراثت کے علاوہ ساڑھے باون تولہ چاندی یا اس کے بقدر رقم یا کوئی اور چیز ضرورت سے زائد موجود ہو، تو اس صورت میں اس پر قربانی واجب ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

وشرائطها: الإسلام والإقامة واليسار الذي يتعلق به) وجوب (صدقة الفطر)

(قوله: واليسار إلخ) بأن ملك مائتي درهم أو عرضاً يساويها غير مسكنه وثياب اللبس أو متاع يحتاجه إلى أن يذبح الأضحية، ولو له عقار يستغله فقيل: تلزم لو قيمته نصاباً، وقيل: لو يدخل منه قوت سنة تلزم، وقيل: قوت شهر، فمتى فضل نصاب تلزمه. ولو العقار وقفاً، فإن وجب له في أيامها نصاب تلزم''

(ج:6،ص:312،ط:دار الفکر)

وفیہ ایضا:

(وسببه) أي سبب افتراضها (ملك نصاب۔۔۔۔)۔۔۔۔(تام)

(قوله ملك نصاب)۔۔۔۔۔۔۔فقد ذكر في البدائع من الشروط الملك المطلق. قال: وهو الملك يدا ورقبة۔۔۔الخ

(کتاب الزکاۃ،ج:2،ص:259،ط:دار الفکر)

وفی الفتاوی الھندیۃ:

(ﻭﺃﻣﺎ) (ﺷﺮاﺋﻂ اﻟﻮﺟﻮﺏ) : ﻣﻨﻬﺎ اﻟﻴﺴﺎﺭ ﻭﻫﻮ ﻣﺎ ﻳﺘﻌﻠﻖ ﺑﻪ ﻭﺟﻮﺏ ﺻﺪﻗﺔ اﻟﻔﻄﺮ ﺩﻭﻥ ﻣﺎ ﻳﺘﻌﻠﻖ ﺑﻪ ﻭﺟﻮﺏ اﻟﺰﻛﺎﺓ۔

(ج:5،ص:292،ط:دارالفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 238
kia ese maal e meeras ki waja say qurbani waajib hogi jisay taqseem karne kay baad wurasa kay qabzay mai na diya gaya ho?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.