عنوان: روزے کی حالت میں کان میں دوا ڈالنے سے متعلق جدید ماہرین طب کی روشنی میں روزے کے فساد کا حکم (10073-No)

سوال: کیا روزے کی حالت میں کان میں دوا ڈال سکتے ہیں؟ جبکہ جدید تحقیق کے مطابق کان میں ڈالی جانے والی دوا حلق میں نہیں پہنچتی ہے۔

جواب: واضح رہے کہ جمہور فقہاء کرام کے نزدیک روزے کی حالت میں کان میں دوا یا تیل ڈالنے سے روزہ فاسد ہوجاتا ہے، لیکن فقہ شافعی اور فقہ مالکی میں اس شرط کی صراحت ہے کہ روزے کا فساد اس وقت ہے کہ دوا دماغ یا حلق تک پہنچ جائے، جبکہ فقہاء احناف نے فساد کے حکم کی بنا اس بات پر رکھی ہے کہ چونکہ دوا دماغ یا حلق پہنچ ہی جاتی ہے، لہذا روزہ فاسد ہوجاتا ہے۔
اس سے معلوم ہوا کہ فقہاء احناف کے نزدیک روزہ فاسد ہونے کی اصل وجہ کوئی شرعی نص نہیں ہے، بلکہ دوا کا دماغ یا حلق تک پہنچ جانا ہے۔
اصولاً جن مسائل میں شرعی نص نہ ہو اور ان کی بنیاد خود فقہاء کرام نے کسی طبی رائے پر رکھی ہوں تو ایسے مسائل میں ماہر اطباء کی متفقہ رائے کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا۔ اگر ہم اس مسئلے کو طب کی روشنی میں دیکھیں تو تمام ماہر اطباء اس بات پر متفق نظر آتے ہیں کہ کان میں ایک باریک مضبوط پردہ ہے جو دوا کے دماغ یا حلق تک پہنچنے میں مانع ہے، الا یہ کہ وہ پردہ پھٹ جائے یا اس میں سوراخ ہوجائے تو ایسی صورت میں دوا براہ راست حلق تک پہنچ جاتی ہے۔
لہذا اگر کان کا پردہ صحیح سالم ہو تو روزے کی حالت میں کان میں دوا ڈالنے سے روزہ فاسد نہیں ہوگا، البتہ اگر کوئی شخص قدیم جمہور فقہاء کرام کے قول پر عمل کرتے ہوئے روزے کی حالت میں کان میں دوا ڈالنے سے احتیاط کرے تو یہ بات شبہات سے دور ہونے کی وجہ سے زیادہ بہتر ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

المبسوط السرخسي: (67/3، ط: دار المعرفة)
والإقطار في الأذن كذلك يفسد؛ لأنه يصل إلى الدماغ والدماغ أحد الجوفين.

البحر الرائق: (باب ما يفسد الصوم و ما لا يفسد، 300/2، ط: دار الكتاب الاسلامي)
(قوله، وإن أقطر في إحليله لا) أي لا يفطر أطلقه فشمل الماء والدهن، وهذا عندهما خلافا لأبي يوسف، وهو مبني على أنه هل بين المثانة والجوف منفذ أم لا، وهو ليس باختلاف فيه على التحقيق فقالا: لا، ووصول البول من المعدة إلى المثانةبالترشح، وما يخرج رشحا لا يعود رشحا كالجرة إذا سد رأسها وألقي في الحوض يخرج منها الماء، ولا يدخل فيها ذكره الولوالجي وقال: نعم قال: هذا في الهداية، وهذا ليس من باب الفقه؛ لأنه متعلق بالطب.

فتح القدير: (344/2، ط: شركة مكتبة و مطبعة مصفى البابي الحلبي)
قوله: ولو أقطر في إحليله لم يفطر عند أبي حنيفة، وقال أبو يوسف: يفطر، وقول محمد مضطرب فيه) والإفطار في أقبال النساء، قالوا أيضا هو على هذا الخلاف، وقال بعضهم: يفسد بلا خلاف لأنه شبيه بالحقنة قال في المبسوط: وهو الأصح (قوله: فكأنه وقع إلخ) يفيد أنه لا خلاف لو اتفقوا على تشريح هذا العضو فإن قول أبي يوسف بالإفساد إنما هو بناء على قيام المنفذ بين المثانة والجوف، فيصل إلى الجوف ما يقطر فيها، وقوله بعدمه بناء على عدمه، والبول يترشح من الجوف إلى المثانة فيجتمع فيها... وهذا اتفاق منهم على إناطة الفساد بالوصول إلى الجوف. ويفيد أنه إذا علم أنه لم يصل بعد بل هو في قصبة الذكر لا يفسد، وبه صرح غير واحد.

الفتاوي الهندية: (204/1، ط: دار الفكر)
ومن احتقن أو استعط أو أقطر في أذنه دهنا أفطر، ولا كفارة عليه هكذا في الهداية، ولو دخل الدهن بغير صنعه فطره كذا في محيط السرخسي.
ولو أقطر في أذنه الماء لا يفسد صومه كذا في الهداية. وهو الصحيح هكذا في محيط السرخسي.

فتاوی دارالعلوم کراتشی: (72/3، ط: ادارۃ المعارف کراتشي)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2785 Dec 22, 2022
rozay ki halat me / mein kan / kaan me /mein dawa dalnay se / say mutaliq jadid mahireene tib / doctors / tabib ki roshni me / may rozay k fasad ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.