عنوان: مرحوم بچے کی تصاویر اور ویڈیوز محفوظ رکھنے اور دیکھنے کا حکم (10165-No)

سوال: موبائل میں مرحوم بچہ کی تصاویر اور ویڈیوز کو محفوظ رکھنا اور اس کا دیکھنا کیسا ہے اور کیا مرحوم بچے پر اس کا اثر پڑے گا؟

جواب: واضح رہے کہ شریعت مطہرہ نے بلا عذر تین دن کے بعد میت کے اہل خانہ سے تعزیت کرنے کو پسندیدہ قرار نہیں دیا ہے، تاکہ اہل میت اپنا غم بھول جائیں اور ان کا غم دوبارہ تازہ نہ ہو، اس سے معلوم ہوا کہ کوئی بھی ایسا طریقہ اختیار کرنا جس سے مرحوم کا غم دیر تک باقی رہے، شرعاً ناپسندیدہ عمل ہے۔
چونکہ مرحوم بچے کی تصاویر اور ویڈیوز محفوظ رکھنے سے اس کے لواحقین کا غم برقرار رہے گا، لہذا اس سے اجتناب کرنا چاہیے، خصوصاً جبکہ بعض اہل علم کے نزدیک ڈیجیٹل تصاویر بھی حرام تصاویر میں داخل ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (339/2، ط: دار الفکر)

ولا بأس بنقله قبل دفنه وبالإعلام بموته وبإرثائه بشعر أو غيره۔۔۔وبتعزية أهله وترغيبهم في الصبر وباتخاذ طعام لهم وبالجلوس لها في غير مسجد ثلاثة أيام، وأولها أفضل. وتكره بعدها إلا لغائب. وتكره التعزية ثانيا
(قوله وتكره بعدها) لأنها تجدد الحزن منح والظاهر أنها تنزيهية، ط. (قوله إلا لغائب) أي إلا أن يكون المعزي أو المعزى غائبا فلا بأس بها جوهرة. قلت: والظاهر أن الحاضر الذي لم يعلم بمنزلة الغائب كما صرح به الشافعية (قوله وتكره التعزية ثانيا) في التتارخانية: لا ينبغي لمن عزى مرة أن يعزي مرة أخرى رواه الحسن عن أبي حنيفة. اه. إمداد

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 500 Jan 16, 2023
marhom / marhoom bachey/ bete ki tasveer/ photo / picture or video mehfoz rakhne or dekhne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.