عنوان: گھر میں گڑیا رکھنے کا حکم (10421-No)

سوال: حضرت! کیا تصویر والی گڑیا گھر میں رکھ سکتے ہیں، یہ آنکھیں نہیں کھول سکتی؟

جواب: چونکہ یہ کھلونا جاندار کا مجسمہ ہے، نیز اس میں چہرہ اور اس کے اعضاء کان، ناک اور آنکھیں بالکل واضح ہیں، اس لیے اس گڑیا کو گھر میں رکھنا جائز نہیں ہے، اس کے بجائے کسی بے جان چیز، جیسے: گاڑی یا گھر وغیرہ کا کھلونا رکھا جا سکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن أبي داود: (رقم الحديث: 227، ط: دار الرسالة العالمية)
حدثنا حفص بن عمر، حدثنا شعبة، عن علي بن مدرك، عن أبي زرعة بن عمرو بن جرير، عن عبد الله بن نجي، عن أبيه عن علي، عن النبي - صلى الله عليه وسلم - قال: "لا ‌تدخل الملائكة ‌بيتا فيه ‌صورة ولا كلب ولا جنب".

شرح معاني الآثار: (رقم الحديث: 6947، ط: عالم الكتب)
حدثنا محمد بن النعمان ، قال: ثنا أبو ثابت المدني قال: ثنا حماد بن زيد ، عن رجل ، عن عكرمة ، عن أبي هريرة قال: الصورة الرأس ، فكل شيء ليس له ‌رأس ، فليس بصورة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 668 May 01, 2023
ghar me /mein gurya / doll rakhne ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.