عنوان: پرانی جائے نماز اور جزدان کا حكم(10664-No)

سوال: مفتی صاحب! پرانی ہو جانے والی جائے نماز اور جزدان کا کیا کرنا چاہیے؟

جواب: فقہاء کرام نے قرآن پاک کے آداب میں یہاں تک لکھا ہے کہ قرآن کریم کی خطاطی میں جو قلم تراش استعمال ہوا ہے، اسے بھی پھینکنے میں احتیاط کرنی چاہیے، لہذا جائے نماز اور قرآن پاک کے وہ جزدان جو پرانے یا بوسیدہ ہوجائیں، انہیں کسی قابلِ احترام کام میں استعمال کرنا چاہیے، انہیں كسی ایسی جگہ استعمال کرنا یا پھینکنا مناسب نہیں ہے جہاں ان کی بے ادبی ہوتی ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (178/1، ط: دار الفكر)

ولا ترمى براية القلم المستعمل لاحترامه كحشيش ‌المسجد وكناسته لا يلقى في موضع يخل بالتعظيم.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 469 Jun 22, 2023
purane / puranay jai namaz or juzdan ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.