عنوان: گزشتہ سالوں کے سجودِ تلاوت کی تعداد یاد نہ ہونے کی صورت میں ادائیگی کا حکم (11033-No)

سوال: میری عمر 25 سال ہے۔ مجھے نہیں معلوم تھا کہ سجدہ تلاوت واجب ہے، اب پتہ چلا کہ یہ واجب ہے۔ سوال یہ ہے کہ جو سجدہ تلاوت اب تک ادا نہیں کیے ہیں وہ میں کیسے ادا کروں؟ مجھے لوگوں نے بتایا کہ دل میں جو غالب گمان آجائ کہ بلوغت کے بعد کتنے سجدہ چھوٹے ہیں، اتنے سجدہ ادا کر لو۔میرے دل میں کوئی غالب گمان نہیں آ رہا کہ کتنے سجدہ چھوٹے ہیں، آپ ہی بتا دیں کہ میں کتنے سجدہ تلاوت ادا کر لوں؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں چونکہ آپ کو سجدوں کی تعداد یاد نہیں ہے، اس لئے آپ وقتاً فوقتاً بلا تعیین سجدے کرتے رہیں یہاں تک کہ دل گواہی دینے لگے کہ اب آپ کے ذمہ کوئی سجدہ باقی نہیں رہا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار :(109/2، ط: سعید)
(وهي على التراخي) على المختار ويكره تأخيرها تنزيها، ويكفيه أن يسجد عدد ما عليه بلا تعيين۔

فتاوی محمودیة: (469/7، ط: دار الافتاء جامعه فاروقیه)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 562 Sep 12, 2023

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.