عنوان: بلی کے کاٹنے کے بعد مالک کا مرغے کو ذبح کرنے سے اس کے حلال ہونے کا حکم(11129-No)

سوال: ایک مرغے پر بلی نے حملہ کرکے اس کی موٹی گردن کے علاوہ گردن کا چمڑا اور سب رگیں کاٹ دی، لیکن مرغا ابھی زندہ تھا اور روح جسم میں باقی تھی کہ مالک نے پکڑ کر ذبح کر دیا، کچھ خون نکلنے کے بعد روح نکل گئی۔ اب اسے کھالیں یا پھینک دیں؟ رہنمائی فرمائیں۔

جواب: سوال میں پوچھی گئی صورت میں چونکہ مرغے کے گلے کی رگیں پہلے سے ہی کٹ چکی تھیں، لہذا مالک کے ذبح کرنے سے وہ مرغا حلال نہیں ہوا ہے، اس لیے اس کا کھانا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوى الهندية: (287/5، ط: دار الفكر)
وفي الجامع الصغير: إذا قطع نصف الحلقوم ونصف الأوداج ونصف المريء لا يحل؛ لأن الحل متعلق بقطع الكل أو الأكثرو وليس للنصف حكم الكل في موضع الاحتياط كذا في الكافي... سنور قطع رأس دجاجة فإنه لا يحل بالذبح، وإن كان يتحرك، كذا في الملتقط..

احسن الفتاوی: (385/7، ط: سعید)

فتاوی دار العلوم دیوبند مکمل و مدلل: (300/15، ط: مکتبة امداد العلوم)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 465 Oct 02, 2023
billi k katne k baad malik ka murghe ko zibah karne se us k halal hone ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Halaal & Haram In Eatables

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.