عنوان: جماعت کی نماز میں قعدہ اولی میں مقتدی کا تشہد کے بعد کلمہ وغیرہ پڑھنے کا حکم (15767-No)

سوال: مفتی صاحب! چار رکعت فرض نماز میں اگر کوئی مقتدی قعدہ اولی میں امام سے پہلے ہی تشہد پڑھ لے تو کیا اس کے بعد وہ خاموش رہے گا یا کچھ مزید پڑھ سکتا ہے، کیونکہ مجھے کسی ساتھی نے بتایا کہ کلمہ پڑھتا رہے گا، یہاں تک امام صاحب قیام کے لیے اٹھ جائیں۔ اس بارے میں رہنمائی فرمائیں۔

جواب: واضح رہے کہ اگر مقتدی جماعت کی نماز کے پہلے قعدہ میں امام سے پہلے تشہد پڑھ کر فارغ ہوجائے تو مقتدی امام کی تیسری رکعت کے لیے اٹھنے تک خاموش رہے گا، اس کے لیے قعدہ اولی میں تشہد کے بعد کوئی کلمہ، دورد شریف یا دعا وغیرہ پڑھنا خلافِ سنت ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

المختار مع رد المحتار: (511/1، ط: دار الفکر)
ولو فرغ المؤتم قبل إمامه سكت اتفاقا
(قوله سكت اتفاقا) لأن الزيادة على التشهد في القعود الأول غير مشروعة كما مر؛ فلا يأتي بشيء من الصلوات والدعاء وإن لم يلزم تأخير القيام عن محله، إذ القعود واجب عليه متابعة لإمامه

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 248 Feb 29, 2024
jamat ki namaz me qada ola mein muqtadi ya tashahhud ke bad kalma waghaira parhne ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.