عنوان: مردوں کے لیے پیروں پر مہندی لگانا (18054-No)

سوال: میرے پاؤں کے تلوؤں پہ جلن ہے جس کا دیسی علاج ہے کہ پیروں پہ مہندی لگائی جائے۔ کیا مرد کے لیے پاؤں کے تلوؤں پہ بطورِ علاج مہندی لگانا جائز ہے؟

جواب: واضح رہے کہ عام حالات میں مردوں کے لیے عورتوں کے ساتھ مشابہت کی وجہ سے پیروں پر مہندی لگانا مکروہ ہے، البتہ تلوؤں پر جلن کی وجہ سے بطورِ علاج مہندی لگانا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

مرقاة المفاتيح: (2828/7، ط: دار الفكر)
وأما خضب اليدين والرجلين، فيستحب في حق النساء ويحرم في حق الرجال إلا للتداوي.

رد المحتار: (422/6، ط: دار الفکر)
(قوله خضاب شعره ولحيته) لا يديه ورجليه فإنه مكروه للتشبه بالنساء.

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 213 Jun 12, 2024

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.