عنوان: جنبی شخص کے لئے قرآن کی تفسیر کو ہاتھ لگانا(2535-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! اگر کوئی شخص حالت جنابت میں ہو، تو اس کے لئے قرآن پاک کی تفسیر چھونے کے بارے میں کیا حکم ہے؟ آیا وہ تفسیر کو چھو سکتا ہے یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ تفسیر کی کتابوں میں اگر قرآن کی آیات کم اور تفسیر زیادہ ہو، تو جنبی شخص کے لئے اس کو چھونے کی گنجائش ہے، جبکہ آیات والے حصے کو ہاتھ نہ لگے، اور اگر تفسیر کم یا برابر ہو، تو جنبی شخص کے لئے اس کو چھونا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

غنیة المستملي: (کتاب الطھارة، ص: 52)
ویکرہ ایضا للمحدث ونحوہ مس تفسیر القرآن وکتب الفقہ وکذا کتب السنن لانھا لا تخلو عن آیات۔

رد المحتار: (293/1)
ان کان التفسیر اکثر لا یکرہ، وان کان القرآن اکثر یکرہ، والاولی الحاق المساواة بالثانی وھذا التفصیل ربما یشیر الیہ ماذکرناہ عن النھر۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1117 Nov 16, 2019
junbi shaks ke / key liye quran ki tafseer ko hath lagana, Touching the interpretation of the Qur'an for a junbi / impure

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.