عنوان: ردی کاغذ یا اخبار سے دسترخوان صاف کرنا(2561-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! ردی کاغذات اور اخبار سے دسترخوان یا میز صاف کرنے میں شرعا کوئی قباحت تو نہیں ہے؟

جواب: واضح رہے کہ کاغذ علم حاصل کرنے کا ایک آلہ ہے، خواہ اس پر کچھ لکھا ہوا ہو، یا نہ ہو، دونوں صورتوں میں وہ قابل احترام ہے، لہذا اس سے دسترخوان یا دوسری گندگی صاف کرنا اس کی بے ادبی اور بے حرمتی کی وجہ سے مکروہ تحریمی ہے، البتہ ایسا کاغذ جو صرف صفائی ہی کی غرض سے بنایا جاتا ہے، جیسے ٹشو پیپر، اس سے دسترخوان یا دوسری چیزوں کو صاف کرنے میں کوئی مضائقہ نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (باب الانجاس، 552/1)
قوله: وشيء محترم) أي: ما له احترام واعتبار شرعا۔۔۔۔۔۔۔۔
وكذا ورق الكتابة لصقالته وتقومه، وله احترام أيضا لكونه آلة لكتابة العلم، ولذا علله في التتارخانية بأن تعظيمه من أدب الدين.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 833 Nov 18, 2019
radi / raddi kaghaz ya akhbar / akhbaar / paper se / sey dastarkhwan saf karna, Clean the tablecloth with waste paper or newspaper

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.