عنوان: ولادت سے قبل بچے کی طرف سے صدقۃ الفطر کی ادائیگی کا حکم(104377-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! کیا حمل کا بھی صدقہ فطر دینا ہوتا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ صدقۃ الفطر اس شخص پر واجب ہوتا ہے، جو عید الفطر کی صبح صادق کے وقت موجود ہو، لہذا اگر عید کی صبح صادق سے پہلے پہلے بچے کی ولادت ہو گئی، تو اس کی طرف سے صدقۃ الفطر ادا کیا جائے گا اور اگر عید الفطر کی صبح صادق تک بچے کی ولادت نہ ہوئی ہو، تو اس کی طرف سے صدقۃ الفطر ادا کرنا واجب نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما في مختصر القدوري:

"ووجوب الفطرة يتعلق بالفجر الثاني من يوم الفطر، فمن مات قبل ذلك لم تجب فطرته، ومن أسلم أو ولد بعد طلوع الفجر لم تجب فطرته".

(مختصر القدوری: ٢١٨ ، کتاب الزکوۃ، ط: إدارة القرآن والعلوم الإسلامية)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 361
viaadat / wilaadat / birth se / sey qabal bache / child ki taraf se / sey sadqa fitr / sadqatul fitar ki adaiqi / daege ka hokom / hukum / hukom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sadqa-tul-Fitr (Eid Charity)

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com