عنوان: شارٹ ٹراؤزر (Short trouser) پہن کر سونا(4493-No)

سوال: مفتی صاحب ! کیا رات میں صرف سونے کے لیے شارٹ ٹراوزر (جو گھٹنوں سے تھوڑی سی اوپر ہوتی ہے) پہنی جا سکتی ہے؟

جواب: مرد کا ستر ناف کے متصل نیچے سے لے کر گھٹنے تک ہے، لہذا گھٹنہ اور اس سے متصل اوپر کا حصہ دوسرے شخص کے سامنے بلاضرورتِ شرعیہ کھولنا جائز نہیں ہے، جبکہ تنہا یا اہلیہ کے سامنے ستر چھپانا اگرچہ واجب تو نہیں ہے، لیکن بلا ضرورت ستر کھولنا پسندیدہ بھی نہیں ہے، حدیث میں ہے:
حضرت ابن عمررضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : تم برہنہ ہونے سے اجتناب کرو( اگرچہ تنہائی کیوں نہ ہو)، کیوں کہ پاخانہ اور اپنی بیوی سے مجامعت کے اوقات کے علاوہ تمہارے ساتھ ہر وقت وہ فرشتے ہوتے ہیں جو تمہارے اعمال لکھنے پر مامور ہیں؛ لہذا تم ان فرشتوں سے حیا کرو اور ان کی تعظیم کرو ( ترمذی)''۔
نیز دوسری روایت میں ہے:
'' حضرت بہز بن حکیم اپنے والد حضرت حکیم سے اور وہ بہز کے دادا (حضرت معاویہ ابن حیدہ) سے روایت کرتے ہیں کہ رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تم اپنا ستر چھپائے رکھو، علاوہ اپنی بیوی یا اپنی لونڈی کے (کہ ان کے سامنے اپنا ستر چھپانا ضروری نہیں ہے)۔ حضرت معاویہ کہتے ہیں کہ میں نے عرض کیا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! مجھے بتائیے کہ آدمی جب خلوت تنہائی میں ہو تو کیا وہاں بھی اپنا ستر چھپائے رکھے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اللہ تعالیٰ لائق تر ہے کہ اس سے شرم کی جائے''۔ (ترمذی)
لہذا اکیلے میں بھی ایسا لباس پہننا چاہیے، جس میں ستر چھپ سکے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن الترمذی: (رقم الحدیث: 2769)
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، حَدَّثَنَا بَهْزُ بْنُ حَكِيمٍ، حَدَّثَنِي أَبِي، عَنْ جَدِّي، قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏عَوْرَاتُنَا مَا نَأْتِي مِنْهَا وَمَا نَذَرُ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ احْفَظْ عَوْرَتَكَ إِلَّا مِنْ زَوْجَتِكَ أَوْ مَا مَلَكَتْ يَمِينُكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ الرَّجُلُ:‏‏‏‏ يَكُونُ مَعَ الرَّجُلِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنِ اسْتَطَعْتَ أَنْ لَا يَرَاهَا أَحَدٌ فَافْعَلْ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ وَالرَّجُلُ يَكُونُ خَالِيًا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ فَاللَّهُ أَحَقُّ أَنْ يُسْتَحْيَا مِنْهُ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَجَدُّ بَهْزٍ اسْمُهُ مُعَاوِيَةُ بْنُ حَيْدَةَ الْقُشَيْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رَوَى الْجُرَيْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حَكِيمِ بْنِ مُعَاوِيَةَ وَهُوَ وَالِدُ بَهْزٍ.

و فیه ایضا: (رقم الحدیث: 2800)
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ نَيْزَكَ الْبَغْدَادِيُّ، حَدَّثَنَا الْأَسْوَدُ بْنُ عَامِرٍ، حَدَّثَنَا أَبُو مُحَيَّاةَ، عَنْ لَيْثٍ، عَنْ نَافِعٍ، عَنِ ابْنِ عُمَرَ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِيَّاكُمْ وَالتَّعَرِّيَ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّ مَعَكُمْ مَنْ لَا يُفَارِقُكُمْ إِلَّا عِنْدَ الْغَائِطِ، ‏‏‏‏‏‏وَحِينَ يُفْضِي الرَّجُلُ إِلَى أَهْلِهِ فَاسْتَحْيُوهُمْ وَأَكْرِمُوهُمْ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ غَرِيبٌ، ‏‏‏‏‏‏لَا نَعْرِفُهُ إِلَّا مِنْ هَذَا الْوَجْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو مُحَيَّاةَ اسْمُهُ يَحْيَى بْنُ يَعْلَى.

صحیح مسلم: (154/1)
عن عبدالرحمن بن ابی سعید الخدری عن ابیہ ان رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال لاینظر الرجل الٰی عورۃ الرجل ولا المرأہ الٰی عورۃ المرأۃ ولایفضی الرجل الی الرجل فی ثوب واحدٍ ولاتفضی المرأۃ الی المرأۃ فی الثوب الواحد۔

مجمع الانہر:
''( و ) من ( الرجل إلى ما ينظر الرجل من الرجل ) أي إلى ما سوى العورة ( إن أمنت الشهوة ) وذلك ؛ لأن ما ليس بعورة لا يختلف فيه النساء والرجال، فكان لها أن تنظر منه ما ليس بعورة، وإن كانت في قلبها شهوة أو في أكبر رأيها أنها تشتهي أو شكت في ذلك يستحب لها أن تغض بصرها، ولو كان الرجل هو الناظر إلى ما يجوز له النظر منها كالوجه والكف لا ينظر إليه حتماً مع الخوف''.

و فیه أیضاً: (200/4، ط: دار الکتب العلمیة)
'' وينظر الرجل من الرجل إلى ما سوى العورة وقد بينت في الصلاة أن العورة ما بين السرة إلى الركبة والسرة ليستبعورة''۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 630 Jun 11, 2020
short trouser pehen kar soona, Sleeping by wearing short trousers

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.