عنوان: کیا قبر میں موجود مردے سلام کا جواب دیتے ہیں؟ (105123-No)

سوال: ہمارے امام صاحب جمعہ کی بیان میں کہہ رہے تھے ک جب مسلمان قبرستان جائے، تو وہاں جا کر "السلام علیکم یا اہل القبور" کہے، پوچھنا یہ تھا کہ لفظ "یا" حاضر کیلئے استعمال ہوتا ہے، جبکہ وہاں کوئی حاضر نہیں ہوتا، اس کا کیا مطلب ہے؟

جواب: جب کوئی مسلمان قبرستان جاتا ہے، تو وہاں قبر میں موجود مردوں کو مخاطب کرکے سلام کیا جاتا ہے، اور حدیث شریف میں آتا ہے کہ وہ اس سلام کا جواب بھی دیتے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الحدیث النبوی:

عن ابن عباس رضی اﷲ عنھما قال قال رسول اﷲﷺ مامن احد یمر بقبر اخیہ المومن کان یعرفہ فی الدنیا فیسلم علیہ الا عرفہ ورد علیہ السلام ۔

(التذکرۃ للقرطبی، ص:165)

کما فی مرقاۃ المفاتیح:

وعنھا قالت کیف اقول یارسول ﷲ تعنی فی زیارۃ القبور قال قولی السلام علی اھل الدیار من المؤمنین والمسلمین ویرحم المستقدمین منا والمتاخرین وانا ان شاء اﷲ بکم لاحقون ۔
عن ابی ھریرۃ قال قال ابو رزین یارسول اﷲﷺ ان طریقی علی الموتی فھل من کلام اتکلم بہ اذا مررت علیھم قال قل السلام علیکم…… قال ابورزین یسمعون قال یسمعون ولکن لا یستطیعون ان یجیبوا قال یا ابارزین الا ترضی ان یرد علیک بعددھم من الملائکۃ اھـ
(وقولہ لا یستطیعون ان یجیبوا) ای جوابا یسمعہ الحی والا فھم یردون حیث لانسمع …الخ۔

(مرقاۃ ج:4 ص:116)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 857
kia qabar mai mojood murday salaam ka jawaab daite hain?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.