عنوان: نامحرم کی تصویر والے اشتہار کا حکم(5190-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! اشتہار کے پیج پر نا محرم کی تصویر لگا سکتے ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ بعض علماء کرام کے نزدیک ڈیجیٹل کیمرے کی جس تصویر کی گنجائش دی گئی ہے، اس سے مراد اس چیز کی تصویر ہے، جس کو خارج میں بغیر تصویر کے دیکھنا بھی جائز ہے، اور جس چیز کو خارج میں بغیر تصویر کے دیکھنا جائز نہیں، اس کی ڈیجیٹل تصویر بنانا بھی جائز نہیں، لہذا کسی قسم کے اشتہار میں خواتین کی تصاویر لگانا ناجائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

فتح الباری: (باب عذاب المصورین یوم القیامة، 583/11)
تصویر صورۃ الحیوان حرام شدید التحریم وہو من الکبائر لانہ متوعد علیہ بہذا الوعید الشدید وسواء صنعہ لما یمتہن ام لغیرہ فصنعہ حرام بکل حال وسواء کان فی ثوب اوبساط اودرہم اودینار اوفلس اواناء اوحائط اوغیرہا۔

رد المحتار: (مطلب مکروھات الصلوٰۃ، 647/1)
التصاوير على الثوب صلى فيه أو لا، انتهى. وهذه الكراهة تحريمية. وظاهر كلام النووي في شرح مسلم: الإجماع على تحريم تصوير الحيوان، وقال: وسواء صنعه لما يمتهن أو لغيره، فصنعته حرام بكل حال؛ لأن فيه مضاهاةً لخلق الله تعالى، وسواء كان في ثوب أو بساط أو درهم وإناء وحائط وغيرها اه".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 713 Sep 17, 2020
na mehram ki tasweer walay ishtihaar ka hukum, Ruling / Order for advertisement with the picture of Na mahram / mehram

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.