عنوان: زائد انگلی کو کاٹنا(5987-No)

سوال: اگر کسی کے ہاتھ میں کوئی زائد انگلی ہو، تو کیا اس انگلی کو کاٹنا جائز ہے؟

جواب: زائد انگلی وغیرہ کے کاٹنے سے اگر ہلاک ہونے کا غالب گمان نہ ہو، تو کاٹنا جائز ہے، ورنہ نہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الهندیة: (360/5، ط: رشیدیة)

اذا أراد الرجل أن یقطع إصبعًا زائدة أو شیئًا آخر قال نصیر رحمہ اللہ تعالے : إن کان الغالب علی من قطع مثل ذلک الہلاک فإنہ لا یفعل وإن کان الغالب ھو النجاة فھو في سعة من ذلک․

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 991 Dec 04, 2020
zaid ungli ko katna , Amputation / cutting of the extra finger

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.