عنوان: صدقۃ الفطر اور زکوٰۃ کے نصاب میں فرق(107291-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! کیا صدقہ فطر بھی زکوۃ کی طرح صرف صاحب نصاب پر ادا کرنا لازم ہوتا ہے؟

جواب: فطرانہ بھی صاحب نصاب پر دینا لازم ہے، البتہ فطرانہ کے نصاب اور زکوٰۃ کے نصاب میں فرق ہے، صدقہ الفطر کے نصاب میں "مالِ نامی" اور "سال گزرنے" کی شرطیں نہیں ہیں، لہذا جس بھی مسلمان کے پاس عید الفطر کے دن اس کی ضرورت اور استعمال سے زائد اتنا سامان، نقدی و غیرہ ہو، جسکی مالیت ساڑھے باون تولے چاندی کے برابر ہو، تو اس پر اپنے اور نابالغ بچوں کی طرف سے صدقۃ الفطر دینا لازم ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

قال صاحب الھدایہ:

صدقۃ الفطر واجبۃ، علی کل الحر المسلم، إذا کان مالکا لمقدار النصاب، فاضلا عن مسکنہ، و ثیابہ، و اثاثہ، و فرسہ، و سلاحہ، و عبیدہ، و یخرج ذالک عن نفسہ، و عن اولادہ الصغار۔

(ج: 1، ص: 224، ط: مکتبہ رحمانیہ)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 218

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sadqa-tul-Fitr (Eid Charity)

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com