عنوان: صدقۃ الفطر کی ادائیگی کے لیے نیت ضروری ہے۔(107443-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! کیا فطرہ دیتے وقت مد کا تعین لازمی ہے؟ مثال کے طور پر میں نے کسی مستحق کو 5 افراد کی طرف سے 1000 روپے دے دیے، تو کیا فطرہ ادا ہوگیا یا دوبارہ دینا پڑے گا؟

جواب: واضح رہے کہ صدقۃ الفطر کی ادائیگی کے لیے رقم دیتے وقت یا رقم کو صدقۃ الفطر کے لیے الگ کر کے رکھتے وقت صدقۃ الفطر کی نیت کرنا شرعاً ضروری ہوتا ہے، یہ نیت کرنے سے ہی اس رقم کی مد متعین ہو جاتی ہے، اگر بغیر کسی نیت کے مستحق کو رقم دیدی، تو بعد میں نیت کرنا معتبر نہیں ہے، اس سے صدقۃ الفطر ادا نہیں ہوگا۔
ہاں! اگر مستحق شخص کے پاس بعینہ وہ رقم موجود ہو، تو اب بھی اگر صدقۃ الفطر کی نیت کر لی جائے تو صدقۃ الفطر ادا ہو جائے گاہے، لیکن اگر مستحق نے وہ رقم خرچ کر دی، تو پھر نیت معتبر نہیں ہو گی۔
مد متعین کرنے سے آپ کی کوئی اور مراد ہے، تو اسے مکمل وضاحت سے لکھ کر بھیجیں، تو اس کا جواب دیا جائے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی الدر المختار مع رد المحتار:

"وشرط صحۃ أدائہا نیۃ مقارنۃ لہ أي للأداء، وتحتہ في الشامیۃ: قولہ نیۃ: أشار إلی أنہ لا اعتبار للتسمیۃ فلو سماہا ہبۃ أو فرضاً تجزیہ في الأصح".

(الدر المختار مع رد المحتار: ۳؍۱۸۷ زکریا)

وفی الھندیۃ:

"وَإِذَا دَفَعَ إلَى الْفَقِيرِ بِلَا نِيَّةٍ ثُمَّ نَوَاهُ عَنْ الزَّكَاةِ فَإِنْ كَانَ الْمَالُ قَائِمًا فِي يَدِ الْفَقِيرِ أَجْزَأَهُ، وَإِلَّا فَلَا، كَذَا فِي مِعْرَاجِ الدِّرَايَةِ وَالزَّاهِدِيِّ وَالْبَحْرِ الرَّائِقِ وَالْعَيْنِيِّ وَشَرْحِ الْهِدَايَةِ".

(الفتاویٰ الھندیۃ: كِتَابُ الزَّكَاةِ، الْبَابُ الْأَوَّلُ فِي تَفْسِيرِهَا وَصِفَتِهَا وَشَرَائِطِهَا، ١ / ١٧١، ط: دار الفكر )

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Views: 149

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sadqa-tul-Fitr (Eid Charity)

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com