عنوان: بیت المقدس کی طرف پاؤں پھیلانے کا حکم(7600-No)

سوال: بیت المقدس کی طرف پاؤں پھیلانے کا کیا حکم ہے، کیا اس کی طرف پاؤں پھیلانے میں گناہ تو نہیں ہے؟

جواب: بیت المقدس مسلمانوں کا قبلہ اول ہے اور جب سے اس کا قبلہ ہونا منسوخ ہوا ہے، منسوخ ہونے کے بعد بیت اللہ جیسی اس کی حرمت باقی نہیں رہی ہے، لہذا اس کی طرف پاوں پھیلانے میں کوئی حرج اور گناہ نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

بذل المجهود: (99/1، ط: دار البشائر الإسلامية)
(نهى رسول الله صلى الله عليه وسلم أن تستقبل القبلتين) أي الكعبة وبيت المقدس (ببول وغائط) فيحتمل أنه احترام لبيت المقدس مدة كونه قبلة لنا، أو لأن باستقباله تستدبر الكعبة لمن كان بنحو طيبة، فليس النهي لحرمة القدس.

الموسوعۃ الفقہیۃ الکویتیۃ: (7/34، ط: دار السلاسل)
قال الحطاب المالكي: لا يكره استقبال بيت المقدس ولا استدباره حال قضاء الحاجة، هكذا قال سند، لأن بيت المقدس ليس قبلة۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1289 May 22, 2021
bait ul maqdas ki taraf paaon phelanay ka hukum, The command / order / ruling to spread the feet towards the bait ul maqdas

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.