عنوان: کسی دوسرے طالب علم کی جگہ امتحان دینےکاحکم(7680-No)

سوال: کسی دوسرے طالبعلم کی جگہ امتحان دینا کیسا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ کسی شخص کو دوسرے طالب علم کی جگہ امتحان دینا شرعا جائز نہیں ہے، کیونکہ اس میں دھوکا دہی، قانون کی خلاف ورزی اور نا اہل شخص کو کسی منصب کے حصول میں مدد فراہم کرنا پایا جاتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (المائدۃ، الآیۃ: 2)
وتعاونوا علی البر والتقویٰ ولا تعاونوا علی الإثم والعدوان۔۔۔۔الخ

التفسیر المظہری: (19/3)
"وَلا تَعاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوانِ يعنى لا تعاونوا على ارتكاب المنهيات ولا على الظلم لتشفى صدوركم بالانتقام."

سنن أبي داود: (باب في المعاریض، ص: 679)
عن سفیان بن أسید الحضرمي قال : سمعت رسول اللہ ﷺ یقول: "کبرت خیانۃ أن تحدث أخاک حدیثًا ہو لک بہ مصدق وأنت لہ بہ کاذب".

اعلام الموقعین: (175/3)
"وسیلۃ المقصود تابعۃ للمقصود وکلاہما مقصود".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1112 May 28, 2021
kisi doosray taalib ilm ki jaga imtihan dene ka hukum, Order / ruling to give examination in place of another student

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.