عنوان: بارہ سال کا بچہ اذان دے دے، تو کیا حکم ہے؟(108009-No)

سوال: مفتی صاحب ! میں ایک مسجد میں مؤذن ہوں، میرا بارہ سال کا بھتیجا ہے، اگر کبھی میں اپنے بھتیجے سے اذان کہلوادوں، تو کیا اذان درست ہوجائے گی؟

جواب: افضل یہ ہے کہ ایسا شخص اذان دیا کرے، جو بالغ مکلف ہو، البتہ اگر بارہ سال کا بچہ اذان دے دے، تو چونکہ وہ عاقل ہے، لہذا اس کی اذان ہوجائے گی اور دوبارہ اذان دینے کی ضرورت نہیں ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الشامیۃ:

وأما من حيث إقامة الشعار النافية للإثم عن أهل البلدة فيصح أذان الكل سوى الصبي الذي لا يعقل؛ لأن من سمعه لا يعلم أنه مؤذن بل يظنه يلعب، بخلاف الصبي العاقل؛ لأنه قريب من الرجال، ولذا عبر عنه الشارح بالمراهق۔۔۔الخ

(ج: 1، ص: 394، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 146

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com