عنوان: کیا مسبوق شخص پر امام کی قرات کی ترتیب کی رعایت رکھنا ضروری ہے؟(109170-No)

سوال: مفتی صاحب !جب ہم مرد لوگ نماز کی جماعت میں ملیں، ہمیں پتا نہیں کہ پہلی رکعت میں کونسی سورت پڑھی گئی ہے، ہم پھر کوئی بھی سورت پڑسکتے ہیں یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ مسبوق شخص پر بقیہ رکعتوں کے ادا کرتے وقت امام کی قرأت کی ترتیب کی رعایت کرنا ضروری نہیں ہے، لہذا مسبوق اپنی بقیہ رکعتوں میں جہاں سے بھی چاہے، قرأت کر سکتا ہے، البتہ اگر مسبوق کی ایک سے زائد رکعت چھوٹ گئی ہوں، تو چھوٹی ہوئی رکعتوں میں قرأت کرتے ہوئے ترتیب کی رعایت کرنا ضروری ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (346/2، ط: دار عالم الکتب، الریاض)
والمسبوق من سبقہ الإمام بہا أو ببعضہا، وہو منفرد حتی یثنی ویتعوذ ویقرأ فیما یقضیہ … ویقضي أول صلاتہ في حق قراءۃ، وأخرہا في حق تشہد۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 269
kia masbooq shakhs per / par imam ki qirat ki tarteeb ki reaayat / riaayat rakhna zarori he / hay?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.