عنوان: جس لڑکی نے کسی کی والدہ کا دودھ پیا ہو اس لڑکی سے نکاح کرنا(10020-No)

سوال: ہم 10 بھاٸی ہیں ان میں سب سے بڑا میں ہوں، میرے چوتھے نمبر والے بھائی کے سات ایک لڑکی نے میری والدہ کا دودھ پیا ہے، کیا میرا نکاح اس لڑکی کے ساتھ جاٸز ہے یا نہیں؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں آپ کی والدہ کا دودھ پینے کی وجہ سے وہ لڑکی آپ کی رضاعی بہن بن گئی ہے اور جس طرح نسبی بہن سے نکاح کرنا حرام ہے، اسی طرح رضاعی بہن سے بھی نکاح کرنا حرام ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوى الهندية: (343/1، ط: دار الفکر)

يحرم على الرضيع أبواه من الرضاع وأصولهما وفروعهما من النسب والرضاع جميعا حتى أن المرضعة لو ولدت من هذا الرجل أو غيره قبل هذا الإرضاع أو بعده أو أرضعت رضيعا أو ولد لهذا الرجل من غير هذه المرأة قبل هذا الإرضاع أو بعده أو أرضعت امرأة من لبنه رضيعا فالكل إخوة الرضيع وأخواته وأولادهم أولاد إخوته وأخواته وأخو الرجل عمه وأخته عمته وأخو المرضعة خاله وأختها خالته وكذا في الجد والجدة.

والله تعالىٰ أعلم بالصواب ‏
دارالإفتاء الإخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 547 Dec 08, 2022
jis larki ne / nay kisi ki walda / walida ka dodh /milk piya ho us larki se / say nikah karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.