عنوان: بالغہ لڑکی کا نفقہ (خرچہ) شادی تک والد کے ذمہ ہے(10311-No)

سوال: بالغہ لڑکی کی جب تک شادی نہ ہوئی ہو، اس وقت تک اس کا خرچہ کس پر لازم ہوتا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ اگر غیر شادی شدہ لڑکی کے پاس اپنا مال نہ ہو تو شادی تک اس کا نان و نفقہ (خرچہ) والد کے ذمہ لازم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوی الھندیة: (563/1، ط: دار الفكر)
ونفقة الإناث واجبة مطلقا على الآباء ما لم يتزوجن إذا لم يكن لهن مال كذا في الخلاصة.

المبسوط للسرخسی: (223/5، ط: دار المعرفة)
والذي قلنا في الصغار من الأولاد كذلك في الكبار إذا كن إناثا؛ لأن النساء عاجزات عن الكسب؛ واستحقاق النفقة لعجز المنفق عليه عن كسبه.

واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب
دار الافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 517 Feb 28, 2023
baligha larki ka nufqa / kharcha shadi tak walid k zime / zimme / zimey hai

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Divorce

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.