عنوان: بانجھ لڑکی سے نکاح کا حکم(10365-No)

سوال: نکاح سے پہلے ہی لڑکی بانجھ تھی، مگر یہ بات لڑکے اور اس کے والدین کو نہیں بتائی گئی، اس وجہ سے اولاد بھی نہیں ہوئی، اس بات کا پتہ بہت عرصے بعد لگا ہے۔ کیا بانجھ لڑکی سے کیا ہوا نکاح جائز ہے؟

جواب: واضح رہے کہ بانجھ لڑکی سے کیا گیا نکاح شرعا منعقد ہوجاتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (النساء، الآیة: 3)

وَ اِنْ خِفْتُمْ اَلَّا تُقْسِطُوْا فِی الْیَتٰمٰى فَانْكِحُوْا مَا طَابَ لَكُمْ مِّنَ النِّسَآءِ مَثْنٰى وَ ثُلٰثَ وَ رُبٰعَۚ، فَاِنْ خِفْتُمْ اَلَّا تَعْدِلُوْا فَوَاحِدَةً اَوْ مَا مَلَكَتْ اَیْمَانُكُمْؕ، ذٰلِك اَدْنٰۤى اَلَّا تَعُوْلُوْاؕ o

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 988 Mar 13, 2023
banch larki se / say nikah ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.