عنوان: کسی غریب یا عالم کو حج و عمرہ کرانے کا ثواب(10578-No)

سوال: حج کے متعلق پوچھنا ہے کہ اگر صاحب ثروت حضرات کسی غریب یا علمائے کرام کو حج کرائیں تو اس حج کروانے والے کے لیے کیا اجر ہے؟ نیز اگر اس کے متعلق کوئی حدیث مل جائے تو بہت کرم نوازی ہوگی۔

جواب: واضح رہے کہ کسی بھی نیک کام میں تعاون کرنے والا اس نیک کام کے اجر و ثواب میں برابر کا شریک ہوتا ہے، حدیث شریف میں آتا ہے:"جس نے مجاہد کا سامان سفر تیار کیا یا حاجی کا سامان سفر تیار کیا یا ان کے گھر والوں کی خبرگیری کی یا کسی روزے دار کو افطار کیا تو اس کے لئے ان ہی کے برابر اجر ہے اور ان کے یعنی غازی یا حاجی یا روزہ دار کے اجر میں ذرہ برابر کمی نہیں کی جائے گی"۔ (صحيح ابن خزيمہ، حدیث نمبر: 2064)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحيح ابن خزيمة: (277/3، رقم الحدیث: 2064، ط: المكتب الإسلامي)

عن زيد بن خالد الجهني , قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «من جهز غازيا أو جهز حاجا , أو خلفه في أهله أو فطر صائما كان له مثل أجورهم من غير أن ينتقص من أجورهم شيء» هذا حديث الصنعاني ولم يقل علي: أو جهز حاجا
والحديث أخرجه النسائي في ’’سننه الكبرى‘‘(375/3)(3316)الطبراني في ’’معجمه الكبير‘‘(256/5)( 5271) وسعيد بن منصور في ’’سننه ‘‘(61/2)(2328) وأبو نعيم في ’’الحلية‘‘(98/7).

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 486 Jun 06, 2023
kisi ghreeb / ghareib ya alim / aalim/ molana / mufti ko hajj wa umrah karane / karaney ka sawab

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.