عنوان: احرام میں دوران وضو یا خارش کی وجہ سے بال ٹوٹ جانے کا حکم (13424-No)

سوال: مفتی صاحب! حالت احرام میں اگر دورانِ وضو یا خارش کرنے سے جسم سے بال ٹوٹ جائیں تو کیا اس سے دم واجب ہوگا؟

جواب: احرام میں جسم سے از خود بال ٹوٹنے کی وجہ سے کچھ لازم نہیں ہوتا، تاہم جو بال خارش کرنے کی وجہ سے ٹوٹے ہوں، اس میں ہر بال کے بدلے ایک مٹھی غلہ صدقہ کرنا ہوگا، اور جو بال وضو کرتے ہوئے گرے ہوں تو اس صورت میں اگر وہ تین سے کم ہیں تو کچھ واجب نہیں، اور اگر تین سے زیادہ ہوں تو ہر تین بالوں کے بدلے میں ایک مٹھی غلہ صدقہ کرنا ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوى الهندية: (243/1، ط: دار الفکر)
وإذا حك المحرم رأسه أو لحيته فانتثر منها شعر فعليه صدقة كذا في السراج الوهاج.

غنية الناسك: (ص: 401)
والنتف والقص والإطلاء بالنورة والقلع بالأسنان والسقوط بالمس ونحو ذلك كالحلق (سراج).
فلو سقط من رأسها و لحيته ثلاث شعراتٍ عند الوضوء أو غيره فعليه كف من طعام، كذا في «الخانية» و«مناسك الفارسي»، وهو عن "محمد".
وفي اللباب»: «فعليه كف من طعامٍ أو كسرة أو تمرةٌ لكل شعرة» اه، ثم ما عن "محمد" خلاف ما قدمنا عن (الخانية) بقوله : وإن نتف من رأسه»، وقد مر التوفيق. وحاصله أنه إن سقط ثلاث شعراتٍ بِنَتفه وجب لكل شعرة كفّ من طعام، وإن سقط بدون نتف بأن توضاً فسقط أو احترق بسبب خُبزه كما في مناسك الفارسي وجب للثلاث كف واحدة من طعام)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 426 Dec 13, 2023
ehram me doran e wazu ya kharish ki waja se baal toot jane ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.