عنوان: طاقت نہ ہونے کی صورت میں حیض کے دنوں کے روزوں کی قضا کا حکم(13480-No)

سوال: ایک بزرگ عورت کا سوال ہے کہ میں نے ساری جوانی حیض کے روزوں کی قضا میں روزے نہیں رکھے، اب میں بوڑھی ہوگئی ہوں، اتنے سارے روزے نہیں رکھ سکتی، میرے لیے شریعت کا کیا حکم ہے؟

جواب: واضح رہے کہ حیض کے دنوں کے روزوں کی قضاء کرنا ضروری ہے، لہٰذا پوچھی گئی صورت میں ان سارے روزوں کا حساب کرکے ان کی قضا کی جائے اور اگر قضا کی طاقت نہیں ہو تو ان کا فدیہ ادا کیا جائے، البتہ یہ یاد رہے کہ فدیہ کے ادا کرنے باوجود اگر کبھی آپ کو روزوں کے قضا کرنے کی طاقت ہوجائے تو ان روزوں کی قضاء کرنا ضروری ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الكريم: (البقرة، الآية: 184)
أَيَّامًا مَعْدُودَاتٍ فَمَنْ كَانَ مِنْكُمْ مَرِيضًا أَوْ عَلَى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِنْ أَيَّامٍ أُخَرَ وَعَلَى الَّذِينَ يُطِيقُونَهُ فِدْيَةٌ طَعَامُ مِسْكِينٍ فَمَنْ تَطَوَّعَ خَيْرًا فَهُوَ خَيْرٌ لَهُ وَأَنْ تَصُومُوا خَيْرٌ لَكُمْ إِنْ كُنْتُمْ تَعْلَمُونَ •

صحيح مسلم: (رقم الحديث: 335، ط: دار إحياء التراث العربي)
وحدثنا عبد بن حميد، أخبرنا عبد الرزاق، أخبرنا معمر، عن عاصم، عن معاذة، قالت: سألت عائشة فقلت: ما بال الحائض تقضي الصوم، ولا تقضي الصلاة. فقالت: أحرورية أنت؟ قلت: لست بحرورية، ولكني أسأل. قالت: كان يصيبنا ذلك، فنؤمر بقضاء الصوم، ولا نؤمر بقضاء الصلاة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 266 Dec 27, 2023
taqat na hone ki soorat mein haiz ke dino ke rozo ki qaza ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.