عنوان: بیٹی کے لیے سود کے پیسوں سے جہیز خریدنا(1354-No)

سوال: السلام علیکم، حضرت میری بیٹی کی کچھ عرصے کے بعد شادی ہونے والی ہے، میرے پاس کچھ رقم ہے، جو مجھے بینک سے سود کی رقم ملی ہے، کیا میں ان پیسوں سے اپنی بیٹی کے جہیز کے لیے سامان لے سکتا ہوں یا نہیں؟

جواب: شریعت مطہرہ میں سود کی رقم کا استعمال کرنا حرام اور گناہ ہے، لہذا اس رقم سے بیٹی کا جہیز لینا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

مشکوۃ المصابیح: (باب الربوا، ص: 244)

عن جابر قال لعن رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ وسلم اکل الربوا وموکلہ وکاتبہ وشاھدیہ… وقال ھم سواء ۔رواہ مسلم۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1018 Apr 22, 2019
beti ke/kay lyay/liay sood/soodh ke/kay paison/peson se jahaiz/jahez khareedna/kharidna , Can one buy one's daughter's dowry through money earned by interest?/is it allowed/permissible/prohibited to buy daughter's dowry by using money earned through interest?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.