عنوان: جانور کے سینگ داغنے اور اس کی قربانی کا حکم(101391-No)

سوال: قربانی کے جانور کے سینگ میں بچپن ہی سے تیزاب کے ڈراپ ڈال کر سینگ ختم کردیےہوں، ایسے جانور کی قربانی کیسی ہے؟

جواب:
واضح رہے کہ بے زبان جانور کو اذیت دے کر اس کے سینگ نکلنے سے روکنا شرعا ممنوع اور ظلم کے زمرے میں آتا ہے، تاہم ایسے جانور کی قربانی جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (323/6، ط: سعید)
"قوله: ويضحي بالجماء هي التي لا قرن لها خلقة، و كذا العظماء التي ذهب بعض قرنها بالكسر أو غيره، فإن بلغ الكسر المخ لم يجز. قهستاني. و في البدائع: إن بلغ الكسر المشاش لايجزي، و المشاش رؤس العظام مثل الركبتين و المرفقين".

الہندیۃ: (297/5، ط: رشیدیة)
"و يجوز بالجماء التي لاقرن لها و كذا مكسورة القرن، كذا في الكافي. وإن بلغ الكسر المشاش لايجزيه، و المشاش رؤس العظام مثل الركبتين و المرفقين، كذا في البدائع".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 195
Janwar kay seeng daghnay aur us ki qurbani ka hukum, Ruling on burning the horns of animals and sacrificing them

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.