عنوان: کیا بیوی کے معاف کردینے سے مہر ذمہ سے ساقط ہوجاتا ہے؟ (1423-No)

سوال: میں نے بعض لوگوں کو خود کہتے ہوئے سنا ہے کہ بیوی اگر مہر معاف بھی کردے، تب بھی مہر معاف نہیں ہوتا ہے، اور شوہر کو ہر حال میں مہر ادا کرنا ضروری ہے، اور مہر ادا کیے بغیر بیوی کے پاس جانا صحیح نہیں ہے، پوچھنا یہ ہے کہ لوگوں کی یہ بات کہاں تک درست ہے؟

جواب: واضح رہے کہ مہر بیوی کا حق ہے، اگر بیوی اپنا مہر خوشی سے معاف کردے، تو مہر شوہر کے ذمہ سے ساقط ہوجاتا ہے، اور شوہر کے ذمہ اس کی ادائیگی واجب نہیں ہوتی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھدایۃ: (کتاب النکاح، 325/2)

(وإن حطت عنه من مهرها صح الحط) ؛ لأن المهر بقاء حقها والحط يلاقيه حالة البقاء۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 450 May 03, 2019
Kia biwi kay maaf muaf kardainay se mehr zimma say saqit hojata hay, Does forgiving Mehr by a wife invalidates it?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.