عنوان: دمِ جنایت کا گوشت حرم کے مساکین کے علاوہ کسی دوسرے ملک کے مساکین کو دینے کا حکم(14581-No)

سوال: مفتی صاحب! کیا جنایت احرام کا دم واجب حرم کی حدود میں ذبح کرکے اس کا گوشت کسی دوسرے ملک کے مساکین میں بانٹ سکتے ہیں جیسا کہ کچھ سعودی حکومتی ادارے کرتے ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ دمِ جنایت کا حدودِ حرم میں صرف ذبح کرنا ضروری ہے، حرم کے مساکین کو اس کا گوشت دینا شرط نہیں ہے، بلکہ حدودِ حرم میں ذبح کرنے کے بعد کسی بھی جگہ کے مساکین کو اس کا گوشت دیا جاسکتا ہے، البتہ حرم کے مساکین کو دینا افضل ہے، لہذا جنایتِ احرام کے دم کے لیے حدودِ حرم میں جانور ذبح کرنے کے بعد کسی دوسرے ملک کے مساکین میں اس کا گوشت بانٹنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الهداية: (181/1، ط: دار إحياء التراث العربي)
ولا يجوز ذبح الهدايا إلا في الحرم " لقوله تعالى في جزاء الصيد: {هديا بالغ الكعبة} [المائدة: ٩٥] فصار أصلا في كل دم هو كفارة ولأن الهدي اسم لما يهدى إلى مكان ومكانه الحرم قال عليه الصلاة والسلام " منى كلها منحر وفجاج مكة كلها منحر " " ويجوز أن يتصدق بها على مساكين الحرم وغيرهم "

غنية الناسك فى بغية المناسك: (ص: 409، ط: دار الكتب العلمية)
ولا يشترط فيه عدد المساكين، فلو تصدق به على فقير واحد جاز، ولا فقراء الحرم ولا الحرم فلو تصدق به على غيرهم أو أخرجه من الحرم بعد الذبح فتصدق به جاز، وفقراء الحرم أفضل إلا أن يكون غيرهم أحوج.

معلم الحجاج: (ص: 281، ط: مکتبة البشریٰ)

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 304 Jan 17, 2024
dam e janayat ka gosht haram ke masakeen ke ilawa kisi dousray mulk ke masakeen ko dene ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage) & Umrah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.