عنوان: کیا بچہ کے کان میں دودھ ڈالنے سے رضاعت ثابت ہوگی؟ (101538-No)

سوال: مفتی صاحب! سوال یہ ہے کہ میری خالہ نے کسی وجہ سے میرے چھوٹے بھائی کے کان میں اپنا دودھ نکال کر ڈالا تھا، کیا بچے کے کان میں دودھ ڈالنے سے حرمتِ رضاعت ثابت ہوگی؟

جواب: واضح رہے کہ مدتِ رضاعت میں کسی بچہ کو دودھ پلانے سے حرمتِ رضاعت ثابت ہوتی ہے، لہذا اگر کوئی عورت اپنا دودھ نکال کر کسی بچہ کے کان میں ڈال دے، تو اس سے حرمتِ رضاعت ثابت نہیں ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الھندیۃ:

ولا يثبت بالإقطار في الأذن والحقنة والإحليل والدبر والآمة والجائفة وإن وصل إلى الجوف والدماغ۔

(ج: 1، ص: 344، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 588

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Fosterage

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com