عنوان: "اگر تم میرے قریب آئی تو تمہیں طلاق ہے"کہنے کا حکم (15764-No)

سوال: مفتی صاحب! ایک آدمی نے تین سال پہلے اپنی بیوی کو ایک طلاق دے کر تین دن بعد رجوع کیا تھا۔ اب چار دن پہلے اس آدمی نے اپنی بیوی سے کہا کہ اگر تم میرے قریب آئی تو تمہیں طلاق ہے۔ اس مسئلے میں رہنمائی فرمائیں۔

جواب: پوچھی گئی صورت میں اگر بیوی شوہر کے قریب گئی تو ایک طلاق رجعی واقع ہوجائے گی۔
شوہر چونکہ پہلے ایک طلاق دے چکا ہے تو اس طلاق کے واقع ہونے کے بعد دو طلاق ہوجائیں گی اور شوہر کے پاس آئندہ کے لیے ایک طلاق کا اختیار باقی رہے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھندیة: (420/1، ط: دار الفکر)

و وإذا أضافه إلى الشرط وقع عقيب الشرط اتفاقا مثل أن يقول لامرأته: إن دخلت الدار فأنت طالق.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 196 Feb 28, 2024
"agar tum mere qareeb ai too tumhe talaq hai" kehne ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Divorce

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.