عنوان: قضاء روزے کے دوران حیض آجانا (15781-No)

سوال: مفتی صاحب! میں نے اپنے قضا روزہ پورے کرنے کی نیت سے روزہ رکھا تھا، لیکن مغرب سے ایک گھنٹہ پہلے حیض آنے کی وجہ سے میرا روزہ ٹوٹ گیا۔ اب کیا یہ روزہ میں دوبارہ رکھوں یا اسی طرح قبول ہوجائے گا؟

جواب: روزے کی حالت میں اگر مغرب سے پہلے کسی بھی وقت عورت کو حیض آجائے تو اس کی وجہ سے روزہ فاسد ہوجاتا ہے، اور پاک ہونے کے بعد اس روزے کی قضا رکھنا لازم ہوتا ہے، لہذا پوچھی گئی صورت میں آپ کا روزہ فاسد ہوگیا ہے، پاک ہونے کے بعد دوبارہ روزہ کی قضا رکھنا لازم ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

بدائع الصنائع: (94/2، ط: دار الكتب العلمية)

و لو حاضت المرأة ونفست بعد طلوع الفجر فسد صومها؛ لأن الحيض والنفاس منافيان للصوم لمنافاتهما أهلية الصوم شرعًا بخلاف القياس بإجماع الصحابة -رضي الله عنهم- على ما بينا فيما تقدم بخلاف ما إذا جن إنسان بعد طلوع الفجر، أو أغمي عليه. و قد كان نوى من الليل إن صومه ذلك اليوم جائز لما ذكرنا أن الجنون، والإغماء لاينافيان أهلية الأداء وإنما ينافيان النية، بخلاف الحيض والنفاس، والله أعلم.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 338 Mar 02, 2024
qaza roza rozay ke doran haiz ajana

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.