عنوان: دیکھنے میں دو سال کا لگنے والے بیل کی قربانی کرنے کا حکم (15950-No)

سوال: مفتی صاحب! رہنمائی فرمائیں کہ قربانی کے لیے جانور (بیل) اگر دو دانت کا نہیں ہوا ہو اور دو سال کا بھی پورا نہیں ہوا ہو، مگر دیکھنے میں دو سال کے جانور کے برابر یا اس سے بھی بڑا لگ رہا ہو تو کیا اس کی قربانی جائز ہے؟

جواب: شریعتِ مطہرہ میں بڑے جانور کی قربانی درست ہونے کے لیے ایک خاص عمر مقرر ہے، اس سے پہلے اس کی قربانی درست نہیں ہوتی۔
لہذا جو بیل دو سال کا نہ ہوا ہو، اگرچہ وہ جسامت کے اعتبار سے دو سال یا اس سے بڑا نظر آرہا ہو، اس کی قربانی جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (321/6، ط: دارالفکر)
(وصح الجذع) ذو ستة أشهر (من الضأن) إن كان بحيث لو خلط بالثنايا لا يمكن التمييز من بعد. (و) صح (الثني) فصاعدا من الثلاثة والثني (هو ابن خمس من الإبل، وحولين من البقر والجاموس، وحول من الشاة)

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 193 May 16, 2024
dekhne mein dou 2 saal ka lagne wale bail gain janwar ki qurbani karne ka hokom hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.