عنوان: مرد اور عورت کے اگلے حصے سے نکلنے والی ریح (ہوا) کا حکم    (102238-No)  

سوال: مستورات کے حوالے سے یہ پوچھنا ہے کہ بچوں کے ہونے کے بعد اگلی جگہ سے بھی ہوا خارج ہوتی رہتی ہے تو کیا اگلی راہ سے ہوا خارج ہونے پر وضو ٹوٹ جاتا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ مرد اور عورت کے اگلے حصے سے نکلنے والی ہوا سے وضو نہیں ٹوٹتا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:
کذا في رد المحتار على الدر المختار:
لا – ينقض - خروجُ ريح مِن قُبُل وَذَكر ؛ لأنه اختلاج ؛ أي ليس بريح حقيقة ، ولو كان ريحا فليست بمنبعثة عن محل النجاسة فلا تنقض "
(ج1، ص136)

لمافی فتح القدیر:
واما الریح من الذکر فھو اختلاج لا ریح فلا ینقض کالریح الخارجۃ من جراحۃ فی البطن.
(ج1، ص38، رشیدیہ)


واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

طهارت میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

16 Oct 2019
بدھ 16 اکتوبر - 16 صفر 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com