عنوان: نماز یا درس قرآن کے بعد امام صاحب سے مصافحہ کرنا(2401-No)

سوال: ہماری مسجد میں نماز کے بعد درس قرآن ہوتا ہے، درس قرآن کے بعد جب امام صاحب کھڑے ہوتے ہیں تو سارے نمازی مصافحہ کے لیے کھڑے ہو جاتے ہیں اس میں کبھی ناغہ نہیں ہوتا، کیا اس طرح کی پابندی کرنا بدعت میں شامل ہے؟

جواب: نماز یا درس قرآن کے بعد سنت سمجھ کر مصافحہ کرنا اور اس پر مداومت اختیار کرنا بدعت ہے، البتہ اگر سنت اور لازم سمجھے بغیر کبھی کبھار مصافحہ کرلیا جائے تو مضائقہ نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (381/6)
و نقل فی تبیین المحارم عن الملتقط انہ تکرہ المصافحہ بعد اداء الصلوة بکل حال لان الصحابة ما صافحوا بعد اداء الصلوة و لانھا من سنن الروافض ۔۔۔۔۔۔۔۔قال ابن الحاج من المالکیة فی المدخل: انھا من البدع، وموضع المصافحة فی الشرع انما ھو عند لقاء المسلم لاخیہ لا فی ادبار الصلوات ، فحیث وضعھا الشارع یضعھا، فینھی عن ذلک و یزجر فاعلہ لما اتی بہ من خلاف السنة۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1396 Nov 04, 2019
namaz / namaaz or / aur dars e quran ke / key baad / bad musafa karna, Shaking hands after prayers and teaching the Qur'an

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Bida'At & Customs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.