عنوان: ایک ہی دن رخصتی اور ولیمہ کرنے کا حکم(2462-No)

سوال: نکاح جمعرات کو رخصتی اور ولیمہ جمعہ کو کرنا کیسا ہے؟ یعنی ایک ہی دن رخصتی اور ولیمہ کرنا کیسا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ ولیمہ کا کھانا اس کھانے کو کہا جاتا ہے، جو میاں بیوی کے اکٹھا ہونے، یعنی شبِ زفاف کے بعد کھلایا جاتا ہے، لہذا جس دن شادی ہو، اگر اسی دن رخصتی اور خلوت بھی ہوجائے، تو خلوت کے بعد اسی دن ولیمہ کرنے سے عین سنت ادا ہو جائے گی ۔
اگر جس دن شادی ہو، اس دن خلوت نہ ہو اور اسی دن ولیمہ کر لیا جائے، تو ایسی صورت میں نفسِ ولیمہ کی سنت تو ادا ہو جائے گی، لیکن ولیمہ کے وقت کی سنت ادا نہیں ہو گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (کتاب التفسیر، رقم الحدیث: 4794، 263/3، ط: دار الکتب العلمیۃ)
وعن أنس قال: أولم رسول الله صلى الله عليه وسلم حين بنى بزينب بنت جحش فأشبع الناس خبزاً ولحماً.....

اعلاء السنن: (باب استحباب الولیمۃ، 11/12، ط: ادارۃ القرآن)
والمنقول من فعل النبي صلی الله علیه وسلم أنها بعد الدخول، کأنه یشیر إلی قصة زینب بنت جحش، وقد ترجم علیه البیهقي بعد الدخول، وحدیث أنس في هذا الباب صریح في أنها الولیمة بعد الدخول".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1351 Nov 08, 2019
ik / aik hi din rukhsati or / aur waleema karne / karney ka hukum / hukm, Ruling on doing walima / valima and rukhsati on the same day

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.