عنوان: قرآن کے سائے میں دلہن کو رخصت کرنا کیسا ہے؟(2524-No)

سوال: کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ ہمارے معاشرے میں یہ رواج ہے کہ رخصتی کے وقت دلہن کے سر پر قرآن پکڑ کر اس کو گاڑی تک لے جایا جاتا ہے، اس کی شرعی حیثیت کیا ہے؟

جواب: واضح رہے کے رخصتی کے وقت دلہن کے سر پر قرآن پکڑ کر گاڑی تک لے جانا محض ایک دنیاوی رسم ہے، اس کی شرعا کوئی حیثیت نہیں ہے، اس میں قرآن پاک کی بے ادبی کا بھی اندیشہ ہے،اور اگر اسے لازمی یا دین کا حصہ سمجھ کر کیا جائے تو یہ بدعت کے زمرے میں آئے گا، لہذا اس سے احتراز کرنا ضروری ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (299/2)
(ومبتدع) أي صاحب بدعة وهي اعتقاد خلاف المعروف عن الرسول لا بمعاندة بل بنوع شبهة،
(قوله وهي اعتقاد إلخ) عزاه هذا التعريف في هامش الخزائن إلى الحافظ ابن حجر في شرح النخبة۔۔۔۔۔۔وحينئذ فيساوي تعريف الشمني لها بأنها ما أحدث على خلاف الحق المتلقى عن رسول الله - صلى الله عليه وسلم - من علم أو عمل أو حال بنوع شبهة واستحسان، وجعل دينا قويما وصراطا مستقيما اه فافهم۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2961 Nov 16, 2019
quran ke / key saaye me / mein dulhan ko rukhsat karna kesa he / hey?, What is it like to leave / do rukhsati of a bride in the shadow of the Qur'an?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.