عنوان: تسبیحات دونوں ہاتھوں کی انگلیوں پر کرسکتے ہیں(100262-No)

سوال: مولانا صاحب ! ذکر دونوں ہاتھ کی انگلیوں پر کرسکتے ہیں یا صرف ایک ہاتھ کی انگلیوں پر کرنا چاہیے اوران میں افضل کیا ہے؟

جواب: اَوراد ووظائف کی گنتی کے لئے دائیں ہاتھ کا استعمال کرنا اَفضل ہے اور بعض روایتوں میں مطلقاً انگلیوں پر گننے کی فضیلت وارد ہوئی ہے، اِس اعتبار سے اگر کوئی شخص گننے میں دائیں ہاتھ کے ساتھ بائیں ہاتھ کو بھی شامل کرلے تو بظاہر اِس میں کوئی حرج نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

المستدرک للحاکم: (رقم الحدیث: 2008، 732/1)
عن عبد اللّٰہ بن عمرو رضي اللّٰہ عنہ قال: رأیت رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم یعقد التسبیح، قال ابن قدامۃ بیمینہ۔ (سنن أبي داؤد ۱؍۲۱۰)
عن یسرۃ رضي اللّٰہ عنہا - وکانت من المہاجرات - قالت: قال لنا رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم علیکن بالتسبیح والتہلیل والتقدیس، وعقدن بالأنامل، فإنہن مسئولات مستنطقات ولا تغفلن الخ۔

مسند أحمد:
عن عائشۃ رضي اللّٰہ عنہا أنہا قالت: کان رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم یحب التیمن في شأنہ کلہ مما استطاع في طہورہ وترجلہ وتنعلہ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 221
tasbeehat donon haathon ki unglyon per/par parh sakte/saktay hain?/tasbeehat dono hatho ki ungliyo par kar sakte hen / hein, is it allowed to recite tasbeehat on both hands?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Miscellaneous

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.