عنوان: قربانی کی کھال امام صاحب کو دینا (3414-No)

سوال: مفتی صاحب! کیا قربانی کے جانور کی کھال مسجد کے امام کو دینا جائز ہے یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ امامِ مسجد کو تنخواہ کے طور پر کھال یا اس کی رقم دینا جائز نہیں ہے، البتہ اگر تنخواہ کے علاوہ محض اس کو عالم یا حافظ سمجھ کر کھال ہدیہ کی جائے تو یہ جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (کتاب المناسک، رقم الحدیث: 686)
عن علي رضی اﷲ عنہ أن النبي صلی اﷲ علیہ وسلم: أمرہ أن یقوم علی بدنہ، وأن یقسم بدنہ کلہا لحومہا وجلودہا وجلالہا، ولا یعطي في جزارتہا شیئا۔

اعلاء السنن: (باب التصدق بلحوم الأضاحي، 29/17، ط: دار الکتب العلمیة)
ولأن ما یدفعه إلی الجزار أجرۃ عوض عن عمله وجزارته، ولا تجوز المعاوضة بشيء منھا، فأما إن دفع إلیه لفقرہ أو علی سبیل الھدیة، فلا بأس به؛ لأنه مستحق للأخذ۔

الھندیة: (301/5، ط: دار الفکر)
ولا أن يعطي أجر الجزار والذابح منها، فإن باع شيئا من ذلك بما ذكرنا نفذ عند أبي حنيفة ومحمد رحمهما الله تعالى، وعند أبي يوسف - رحمه الله تعالى -، لا ينفذ ويتصدق بثمنه، كذا في البدائع.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2025 Jan 23, 2020
Qurbani ki khaal Imam ko daina, khal, Giving the sacrificial skin to the Imam, Sacrificial animal skin to Imam of Masjid

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.