عنوان: منگنی نکاح نہیں، اسے توڑنا وعدہ خلافی ہے (3420-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! اگر لڑکی والے کسی لڑکے سے منگنی کرنے کے بعد یہ کہیں کہ ہم اس رشتے کو ختم کرنا چاہتے ہیں، ہمارے خاندان والے اس رشتے پر راضی نہیں ہیں، جب کہ لڑکے والے اس رشتے کو ختم کرنا نہیں چاہتے، کیا اس صورت میں لڑکے کی مرضی کے بغیر رشتہ ختم ہو سکتا ہے؟

جواب: واضح رہے کہ منگنی وعدہ نکاح کا نام ہے، عقد نکاح کا نہیں، اور منگنی توڑنا وعدہ خلافی ہے، اور بغیر کسی معقول اور صحیح عذر کے وعدہ خلافی کرنا گناہ ہے، لہذا منگنی توڑنے کے لئے لڑکے کی رضامندی ہونا ضروری نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (بنی اسرائیل، الآیۃ: 34)
وَ اَوْفُوْا بِالْعَہْدِ ۚ اِنَّ الْعَہْدَ کَانَ مَسْئُوْلًاo

الدر المختار: (12/3)
وكذا أنا متزوجك أو جئتك خاطبا لعدم جريان المساومة في النكاح أو هل أعطيتنيها أن المجلس للنكاح وإن للوعد فوعد۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1561 Jan 23, 2020
Mangni nikah naheen, usay torna waada khilafi hay, nahin, nahen, usey, taurna, wada, khelafi, he, Engagement is not marriage, breaking it is a breach of promise

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.