عنوان: کیا نومولود کے پیدائشی بال کاٹنا ضروری ہیں؟(103856-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! جب کوئی نومولود بچہ پیدا ہو، تو کیا اس کے سر کے بال کاٹنا ضروری ہیں؟ سنا ہے کہ جب تک اس کے پورے سر کے بال نہ کاٹے جائیں، بالوں میں غلاظت رہ جاتی ہے، جس کی وجہ سے بالوں میں ہاتھ لگانے سے ہاتھ ناپاک ہو جاتا ہے، اور اسے دھونا ضروری ہوتا ہے، کیا یہ بات صحیح ہے؟

جواب: واضح رہے کہ نومولود بچہ کی پیدائش کے بعد جب اسے نہلا دیا جاتا ہے، تو اس سے اس کے بال پاک ہوجاتے ہیں، البتہ پیدائشی بال اتار دینا سنت ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الحدیث النبوی:
عن سمرۃ بن جندب رضي اللّٰہ عنہ قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: الغلام مرتہن بعقیقتہ تذبح عند یوم السابع ویسمی ویحلق رأسہ۔رواہ الترمذي(مشکوۃ المصابیح ص:362 باب العقیقۃ)


واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

(مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com

قربانی و عقیقہ میں مزید فتاوی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

02 Apr 2020
جمعرات 02 اپریل - 8 شعبان 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2020. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com