عنوان: ایک محلے کا بندہ دوسرے محلے کی مسجد میں اعتکاف میں بیٹھے تو کیا اس محلے والوں کی سنت ادا ہوجائے گی(104406-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! ہمارے محلہ کا شخص دوسرے محلہ کی مسجد میں اعتکاف میں بیٹھ جائے تو کیا اس محلہ کے دوسرے لوگوں کی طرف سے کافی ہو جائے گا؟

جواب: مذکورہ صورت میں جب آپ کے محلے کا بندہ دوسرے محلے کی مسجد میں اعتکاف میں بیٹھے گا تو جس محلہ کی مسجد میں وہ اعتکاف کرے گا، اس محلہ والوں کی اعتکاف کی سنت ادا ہوجائے گی، البتہ اہل محلہ کو چاہئے کہ وہ خود بھی اعتکاف میں بیٹھنے کا اہتمام کریں۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

وسنۃ مؤکدۃ فی العشر الاخیر من رمضان) أی سنۃ کفایۃ کمافی البرھان وغیرہ لاقترانھا بعدم الانکار علی من لم یفعلہ من الصحابۃ۔

(قولہ أی سنۃ کفایۃ) نظیرھا اقامۃ التراویح بالجماعۃ فاذا قام بھا البعض سقط الطلب عن الباقین فلم یأثموا بالمواظبۃ علی الترک بلا عذر، ولو کان سنۃ عین لأثموا بترک السنۃ المؤکدۃ اثما دون اثم ترک الواجب۔

(ج: 2، ص: 442، ط: دار الفکر)

وفیہ ایضاً:

(قولہ والجماعۃ فیھا سنۃ علی الکفایۃ الخ) أفاد ان اصل التراویح سنۃ عین… بخلاف صلاتھا بالجماعۃ فانھا سنۃ کفایۃ، فلو ترکھا الکل أساء وا، … وھل المراد انھا سنۃ کفایۃ لأھل کل مسجد من البلدۃ أو مسجد واحد منھا أو من المحلۃ؟ ظاھر کلام الشارح الاول، واستظھر ط الثانی، ویظھر لی الثالث، لقول المنیۃ: حتی لو ترک أھل محلۃ کلھم الجماعۃ فقد ترکوا السنۃ وأساء وا اھ، وظاھر کلامھم ھنا ان المسنون کفایۃ اقامتھا بالجماعۃ فی المسجد، حتی لو أقاموھا جماعۃ فی بیوتھم ولم تقم فی المسجد أثم الکل… الخ۔

(فصل فی التراویح، ج: 2، ص: 45، ط: دار الفکر)

وکذا فی فتاوی محمودیۃ:

(ج: 10، ص: 230، ط: ادارۃ الفاروق کراتشی)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 285
aik mehellay ka banda doosray mehellay ki masjid mai aetikaf mai bethay to kia as mehellay walo ki sunnat ada hojaigi

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Aitikaf

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.