عنوان: باپ اور بیٹے کا دو باپ شریک بہنوں سے نکاح کرنا(4424-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! باپ شریک دو بہنوں ( یعنی باپ ایک ہو اور ماں الگ الگ ہو) میں سے ایک بہن سے باپ کا نکاح کرنا اور دوسری سے بیٹے کا نکاح کرنا شرعاً درست ہے؟

جواب: واضح رہے کہ باپ اور بیٹے کا دو ایسی عورتوں سے نکاح کرنا جو آپس میں بہنیں ہوں، جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (النساء، الایة: 24)
واحل لکم ماوراء ذلکم....الخ

بدائع الصنائع: (540/2)
(واحل لکم ما وراء ذلکم)ای ما حرمہ اللہ تعالی۔

الھندیة: (الباب الثالث فی بیان المحرمات، 277/1، ط: زکریا)
ولاباس بان یتزوج الرجل امراۃ ویتزوج ابنہ ابنتھا او امھا کذا فی محیط السرخسی۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1921 May 31, 2020
baap or / aur baite / bete ka do baap shareek behno say / sai nikkah karna, Father and son marry / marring two sisters who / both are from one father

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.