عنوان: تیجہ اور چالیسویں کا حکم(4460-No)

سوال: مفتی صاحب ! تیجہ اور چالیسواں کرنا کیسا ہے؟

جواب: ایصال ثواب کا بہتر طریقہ یہ ہے کہ جتنی توفیق ہو سکے، قرآن کریم پڑھ کر یا مخفی طور پر حسب استطاعت کچھ صدقہ و خیرات کر کے یا اور کوئی نفلی عمل کرکے اس کا ثواب مرحوم کو بخش دیا جائے، باقی اس کے علاوہ جتنے طریقے (مروّجہ قرآن خوانی، تیجہ و چالیسواں اور نیاز وغیرہ) ایصال ثواب کے سلسلے میں رائج ہیں، یہ سب بے اصل اور بدعت کے زمرے میں آتے ہیں، لہذا ان سے اجتناب کرنا چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (مطلب في كراهة الضیافة من أهل المیت، 240/2، ط: سعید)

یکره اتخاذ الضیافة من الطعام من أهل المیت؛ لأنه شرع في السرور لا في الشرور وهي بدعة مستقبحة، وقوله: ویکره اتخاذ الطعام في الیوم الأول والثالث وبعد الأسبوع، ونقل الطعام إلی القبرفي المواسم، واتخاذ الدعوة لقراءة القرآن وجمع الصلحاء والقرّآء للختم أو لقراء ة سورة الإنعام أوالإخلاص".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1816 Jun 06, 2020
teeja or chaleeswaan ka hukum, Ruling of the teeja / chaleeswaan / thirtieth and fortieth

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Bida'At & Customs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.